کون کہتا ہے کہ تصویر میں کم آتا ہے   -   خالد سجاد احمد

کون کہتا ہے کہ تصویر میں کم آتا ہے
آنکھ کا خواب ہی تعبیر میں کم آتا ہے

آپ چل کر میں ترے دل کی طرف کیا جاتا
یہ علاقہ مری جاگیر میں کم آتا ہے

مجھ پہ یوں چھاوں نہ کر آ کے گھٹا کی صورت
دل مرا زلفِ گرہ گیر میں کم آتا ہے

آنکھ سے ہوتی ہوئی دیکھ مسلسل بارش
ہجر وہ غم ہے جو تحریر میں کم آتا ہے

شعر سے کیسے کرے گا وہ مداوہ غم کا
درد کا لطف جسے میر میں کم آتا ہے

کس طرح قید کروں جوشِ جنوں کو خالد
یہ وہ قیدی ہے جو زنجیر میں کم آتا ہے